میکسیکو میں کئی سال سے جاری خشک سالی کے باعث بنیتو ہوارس ڈیم کی جھیل تقریباً خشک ہو جانے پر نصف صدی قبل اس ڈیم میں غرق ہوجانے والا گرجا گھر ایک بار پھر سطح پر ابھر آیا ہے

میکسیکو سٹی (قدرت روزنامہ17-فروری-2017) میکسیکو میں کئی سال سے جاری خشک سالی کے باعث بنیتو ہوارس ڈیم کی جھیل تقریباً خشک ہو جانے پر نصف صدی قبل اس ڈیم میں غرق ہوجانے والا گرجا گھر ایک بار پھر سطح پر ابھر آیا ہے، اور ہر کوئی یہ دیکھ کر حیران ہے کہ پچاس سال پانی کے نیچے گزارنے کے باوجود یہ عمارت تاحال صحیح سلامت ہے. میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 1960ءکی دہائی میں جب بنیتو ہوارس ڈیم کی جھیل میں پانی بھرنا شروع ہوا تو ڈومینیکن چرچ کی پتھر سے بنی عمارت بھی اس جھیل میں ڈوب گئی.

مقامی تاریخ دانوںکے مطابق اس چرچ کی بنیاد سولہویں صدی میں ان عیسائی راہبوں اور راہباﺅں نے رکھی جو عیسائیت کی تبلیغ کے لئے میکسیکو آئے تھے. جب 1962ءمیں اس علاقے کی زراعت کو ترقی دینے کے لئے ڈیم کی تعمیر کی گئی تو دیگر عمارتوں کے ساتھ یہ چرچ بھی ڈیم کی جھیل میں ڈوب گیا. حالیہ کچھ سالوں کے دوران خشک سالی کی وجہ سے ڈیم میں پانی کی سطح صرف 16 فیصد تک آگئی، جس کی وجہ سے چرچ کی عمارت ایک بار پھر پوری طرح باہر دکھانے لگی ہے. اس سے پہلے ہر سال پانی کی سطح کم ہونے پر چرچ کی عمارت جزوی طور پر نظر آتی تھی لیکن اس بار یہ پورا کا پورا پانی سے باہر آ گیا ہے.میکسیکو کے طول و عرض سے عیسائیت کے پیروکار چرچ کے ظہور کو ایک کرشمہ قرار دیتے ہوئے اسے دیکھنے کیلئے پہنچ رہے ہیں، البتہ ماہرین کا کہنا ہے کہ اس میں حیرت کی کوئی بات نہیں کیونکہ پانی کم ہونے سے چرچ کی پتھر سے بنی عمارت باہر آ گئی ہے...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top