ایک ایسی یورپی لڑکی جو داعش کے شدت پسندوں کے لیے خوف کی علامت بن گئی

n3

بغداد(قدرت روزنامہ10فروری2017)مغربی ممالک سے سینکڑوں لڑکے لڑکیوں کے شام و عراق کا سفر کرنے اور شدت پسند تنظیم داعش میں شامل ہونے کی خبریں تو سنتے آئے ہیں لیکن پہلی بار ایک ایسی یورپی لڑکی کی حیران کن خبر سامنے آئی ہے جو اپنے یورپی ملک کو چھوڑ کر عراق آئی اور داعش کے شدت پسندوں کے لیے خوف کی علامت بن گئی،داعش نے اس کے سر کی قیمت 10 لاکھ ڈالر مقرر کر دی ہے. میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق اس 23سالہ لڑکی کا نام جواینا پیلانی ہے جو ڈنمارک کی شہری ہے.

وہ سیاست کی طالبہ تھی لیکن اس نے تعلیم ادھوری چھوڑی اور عراق پہنچ کر داعش کے خلاف لڑنے والی کرد گوریلا فورس ’پیشمرگہ‘ میں شمولیت اختیار کر لی جہاں اس نے رائفل چلانی سیکھی اور ماہر نشانہ باز بن گئی. اب تک وہ داعش کے سینکڑوں شدت پسندوں کو ہلاک کر چکی ہے.
رپورٹ کے مطابق اب ایک طرف اس خوبصورت ماہر نشانہ باز کو داعش قید کرکے جنسی غلام بنانا چاہتی ہے اور دوسری طرف اس کا ملک ڈنمارک اسے جیل کی سلاخوں کے پیچھے قید کرنا چاہتا ہے کیونکہ اس نے حکومت کی طرف سے عراق کے سفر پر عائد پابندی کی خلاف ورزی کی ہے. اب وہ چھپ کر زندگی گزار رہی ہے. میل آن لائن سے گفتگو کرتے ہوئے جو اینا کا کہنا تھا کہ ”میں نے پابندی کی خلاف ورزی کرکے کچھ غلط نہیں کیا، میں یورپ ہی کو محفوظ بنانے کے لیے شدت پسندوں کے خلاف لڑنے آئی تھی. میں نے داعش کو روکنے کے لیے اپنی آزادی اور زندگی داﺅ پر لگائی تاکہ یورپ کا ہر فرد ان شدت پسندوں سے محفوظ رہ سکے لیکن اب میرا اپنا ملک ہی مجھے دہشت گرد سمجھتا ہے.“ جواینا کچھ عرصہ عراق میں لڑنے کے بعد واپس ڈنمارک چلی گئی جہاں اس پر مقدمہ چلا اور اس کے سفر کرنے پر پابندی عائد کر دی گئی لیکن کچھ ہی عرصہ بعد اس نے پابندی کی خلاف ورزی کی اور دوبارہ عراق پہنچ گئی.اس کی غیرموجودگی میں ڈنمارک کی عدالت سے اسے 2سال قید کی سزا سنائی جا چکی ہے. اب ایک بار پھر وہ ڈنمارک واپس پہنچ چکی ہے لیکن خفیہ رہ رہی ہے. ڈنمارک کے دارالحکومت کوپن ہیگن میں ایک خفیہ جگہ پر اس نے میل آن لائن سے گفتگو کی اس نے مزید بتایا کہ ”میں ایک سنائپر ہوں. عراق میں لڑائی کے دوران میں روسی ساختہ رائفل استعمال کرتی تھی. میں چھپ کر شدت پسندوں کا انتظار کرتی اور جیسے ہی ان میں سے کوئی رینج میں آتا میں اس پر گولی چلا دیتی تھی. “ رپورٹ کے مطابق جواینا داعش کے لیے اس قدر خطرناک ثابت ہوئی کہ شدت پسند تنظیم کی طرف سے اس کے سر کی قیمت بھی مقرر کی گئی ہے جو 10لاکھ ڈالر(تقریباً 10کروڑ روپے) ہے.اس کا کہنا ہے کہ ”اب میں ایک جگہ نہیں رہ سکتی، ایک سے دوسری جگہ سفر کرتی رہتی ہوں اور واپس بھی نہیں جا سکتی.میں اب اپنے ملک میں بھی محفوظ نہیں ہوں. شدت پسند مجھے اغواءکرنا چاہتے ہیں، اکثر مجھے دھمکیاں ملتی رہتی ہیں. اگر میں منظرعام پر آتی ہوں تو قید کر دی جاﺅں گی.“
n4
n5
..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

Daily QUDRAT is an UrduLanguage Daily Newspaper. Daily QUDRAT is The Largest circulated Newspaper of Balochistan .

رابطے میں رہیں

Copyright © 2017 Daily Qudrat.

To Top