اس لڑکی کا تذکرہ جو ” عمران خان ” کو دورانِ میچ ہی بھگا کر لے گئی تھی

b7

لاہور(قدرت روزنامہ10فروری2017) آسٹریلوی کرکٹر شین وارن کو بہت بڑا ”پلے بوائے“ سمجھا جاتا ہے لیکن سابق ٹیسٹ کرکٹر کیری او کیف نے عمران خان کی زندگی کے ایک ایسے واقعے سے پردہ اٹھایا ہے جسے پڑھنے کے بعد آپ کو شین وارن دور دور تک نظر نہیں آئیں گے.

غیر ملکی میڈیا کے مطابق او کیف کو1984/85ءکے سیزن میں اس وقت عمران خان کیساتھ کھیلنے کا موقع ملا جب وہ نیو ساؤتھ ویلز اور سڈنی یونیورسٹی کے سڈنی گریڈ کلب کیلئے کھیلنے آسٹریلیا گئے ہوئے تھے.

اوکیف نے بتایا کہ جب یہ واقعہ پیش آیا تب دسمبر 1984ءکو یونیورسٹی اوول نمبر 1 میں نارتھ سڈنی کے خلاف میچ کھیلا جا رہا تھا. عمران خان جب کرکٹ کھیلتے تھے تو ان دنوں میں انہیں ’پلے بوائے‘ سمجھا جاتا تھا اور او کیف نے بھی اسی پر روشنی ڈالی ہے کہ کس طرح اوول یونیورسٹی میں میچ دیکھ رہی ایک خوبصورت لڑکی کو انہوں نے مائل کر لیا تھا. اوکیف نے کہا کہ ”اس کی نظریں صرف ایک کھلاڑی کی طرف تھیں اور وہ نیورسٹی کا خوشگوار شادی شدہ زندگی گزرنے والا کپتان مک او سیولیوان نہیں تھا بلکہ وہ پاکستانی آل راؤنڈر عمران خان تھا اور یہ کہنا بھی غلط نہیں ہے کہ انہیں لڑکیوں کی کوئی کمی نہیں تھی. عمران خان بلاشبہ خواتین کیلئے بہت زیادہ پرکشش تھے.عمران خان ’دی کونافٹ‘ کمپلیکس میں ٹھہرے ہوئے تھے اور سڈنی میں گھومنے پھرنے کیلئے انہیں سپانسرز کی جانب سے لال رنگ کی سپورٹس کار ملی ہوئی تھی. سڈنی یونیورسٹی کی ٹیم ایک فلیٹ وکٹ پر 180 رنز کے چھوٹے ہدف کا دفاع کر رہی تھی اور نارتھ سڈنی کی ٹیم آرام سے ہدف کی جانب بڑھ رہی تھی جب کھانے کا وقفہ ہوا تو یونیورسٹی کے کھلاڑی میچ کے حوالے سے اضطراب کا شکا تھے تو عمران خان کے دماغ میں کچھ اور ہی چل رہا تھا. وہ پارک کے باہر گھوم رہے تھے اورا سپورٹس کار میں ایک لڑکی کے ساتھ بیٹھ کر واپس دی کونافٹ چلے گئے.40 منٹ بعد سڈنی یونیورسٹی کی ٹیم صرف 10 کھلاڑیوں کے ساتھ 180 رنز کا دفاع کرنے کیلئے میدان میں تھی. نارتھ سڈنی جیت کیلئے اچھی طرح تیار تھی اور 180 رنز کے ہدف کے تعاقب میں انہوں نے 33 وکٹوں کے نقصان پر 130 رنز بنا لئے تھے. چیزیں تاریک نظر آ رہی تھیں اور یونیورسٹی کی ٹیم اپنے سب سے بہترین سرائیکنگ باؤلر کے بغیر کھیل رہی تھی. عمران خان واپس نہیں آئے تھے. ٹیم کا کپتان او سولیوان غصے سے لال پیلا ہو رہا تھا اور نارتھ سڈنی کا سکور بڑھ رہا تھا. وہ جانتے تھے کہ سٹار باؤلر کی عدم موجودگی میں ان کیلئے جیت کا یہ بہترین موقع ہے.“ او کیف نے بتایا کہ ”وقفے کے 20 منٹ بعد عمران خان اسی خوبصورت لڑکی کے ساتھ لال رنگ کی سپورٹس کار میں واپس آ گئے اور معمول کی طرح فائن لیگ پر فیلڈنگ کیلئے کھڑے ہو گئے. اچانک ایک وکٹ گری اور نارتھ سڈنی کی صرف 4 وکٹیں باقی رہ گئیں جبکہ اسے جیت کیلئے مزید 30 رنز درکار تھے. عمران خان اپنی ٹیم کے کپتان کے پاس گئے اور کہا کہ ’میں اب باؤلنگ کروں گا.‘ انہوں نے یہ بتانے کی ذرا بھی کوشش نہ کی وہ لیٹ کیوں ہوئے.“ اوکیف نے اعتراف کیا کہ ”عمران خان نے سڈنی یونیورسٹی اوول میں کیا جانے والا سب سے افسوسناک ریورس سوئنگ کا سپیل کیا. اگلے روز سخت محنت کے باعث رن ریٹ میں کمی تو دیکھنے میں آئی لیکن ہمیں وکٹیں نہیں مل رہی تھیں. معمول سے زیادہ لمبے کھانے کے وقفے کے بعد تقریباً 2 بج کر 10 منٹ کا وقت تھا جب عمران خان کے منہ سے وہ خوبصورت الفاظ ادا ہوئے کہ ’کپتان، میں اب باؤلنگ کروں گا.‘ عمران خان نے ایک بڑا آف کٹر سیدھا ٹریور چیپل کی وکٹوں پر دے مارا، دو مزید آف کٹرز کے باعث 2 ایل بی ڈبلیوز ہوئے اور میچ ہمارے ہاتھ میں نظر آنے لگا. مخالف ٹیم پر بہترین دباؤ قائم ہوا اور ہم نے 9 رنز سے میچ جیت لیا. عمران خان نے 23 اوورز میں 25 رنز کے عوض 4 وکٹیں حاصل کیں اور فتح میں ہم کردار ادا کیا. مجھے یقین ہے کہ تمام کھلاڑیوں نے انہیں دیکھتے ہوئے بہت اطمینان محسوس کیا ہو گا.“او کیف نے مزید کہا کہ ”عمران خان کو آخری بار اسی لڑکی کے ساتھ لال رنگ کی سپورٹس کار میں بیٹھ کر واپس کونافٹ جاتے دیکھا گیا. واضح پیغام یہ ہے کہ اگر آپ کلب کرکٹ کھیل رہے ہیں اور کھانے کی اکتاہٹ آپ کیلئے بہت زیادہ ہو گئی ہے تو اور بھی بہت ساری آپشنز ہوتی ہیں.“ سابق آسٹریلوی کرکٹر کی کہانی عمران خان کے دور کے ان تمام کرکٹرز کی باتوں کی تصدیق بھی کرتی ہے کہ جب عمران خان گیند کو سوئنگ کرتے تھے تو انہیں کھیلنا ناممکن ہوتا تھا.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

Daily QUDRAT is an UrduLanguage Daily Newspaper. Daily QUDRAT is The Largest circulated Newspaper of Balochistan .

رابطے میں رہیں

Copyright © 2017 Daily Qudrat.

To Top