شہنشاہ اکبر کے مغلیہ دربار کا ایک معروف کردار ”انارکلی“ ہے۔اگرچہ انار کلی کی زندگی اور موت کے متعلق مختلف آراءپائی جاتی ہیں

اسلام آباد (قدرت روزنامہ14فروری2017) شہنشاہ اکبر کے مغلیہ دربار کا ایک معروف کردار ”انارکلی“ ہے.اگرچہ انار کلی کی زندگی اور موت کے متعلق مختلف آراءپائی جاتی ہیں.

بعض لوگ اس کردار کو محض ایک افسانہ کہتے ہیں جبکہ بعض اس کہانی کو حقیقت قرار دیتے ہیں.ایک طرف مغلیہ سلطنت کے سرکاری ریکارڈ میں انارکلی نام کی کسی خاتون کا کوئی ذکر موجود نہیں تو دوسری طرف لاہور کے سول سیکرٹریٹ میں واقع ایک قبر کو انارکلی سے منسوب کیا جاتا ہے. اگر انارکلی نامی خاتون واقعی کبھی موجود نہ تھی تو پھر اس قبر میں کون استراحت فرما ہے.ویب سائٹ ونڈرفل پوائنٹ کے مطابق اس قبر کے ایک طرف فارسی زبان میں ایک شعر لکھا جو شہنشاہ جہانگیر(شہزادہ سلیم) نے خود لکھا ہے، جس کا ترجمہ ہے کہ ”اگر میں صرف ایک بارپھر اپنی محبوبہ کا چہرہ دیکھ لوں تو میں تابہ روزِ محشر اللہ تعالیٰ کاشکرگزار رہوں گا. “اس شعر کے ساتھ لکھنے والے کا نام”مجنوں سلیم اکبر“ بھی لکھا ہے. یقینا ہندوستان کے مطلق العنان شہنشاہ کا خود اپنے آپ کو مجنوں لکھنا یا کسی ایک عورت کی محبت میں اس طرح کے شعر کہناعجیب لگتا ہے، حالانکہ ان کے حرم سینکڑوں خوبصورت عورتوں سے بھرے ہوتے تھے.مزید براں اس شعر میں جو عمیق درد پنہاں ہے وہ ایک ناکام محبت کو صرف ایک بار پانے کی خواہش اپنے دامن میں لیے ہوئے ہے. ہم شاید کبھی نہ جان سکیں کہ اس قبر کے اندر کون آرام فرما ہے مگر ایک بات یقینی ہے کہ اس قبر میں جو کوئی بھی ہے، وہ کوئی عام خاتون نہیں تھی.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

تازہ ترین

Daily QUDRAT is an UrduLanguage Daily Newspaper. Daily QUDRAT is The Largest circulated Newspaper of Balochistan .

رابطے میں رہیں

Copyright © 2017 Daily Qudrat.

To Top