’’درود پاک کی برکت سے فرشتے کی سزا معاف کر دی گئی ‘‘

اسلام آباد (قدرت روزنامہ13فروری2017)حق تعالیٰ کائنات کے وجود کی توجہیہ پیش کرتے ہوئے کہتا ہے کہ ’’اے حبیب !اگر آپ نے نہ آنا ہوتا تو میں یہ کائنات تخلیق نہ کرتا‘‘. نبی آخر الزمان ﷺ حبیب تعالیٰ اور وجہ تخلیق کائنات ہیں.

آپﷺ کی حیات مبارکہ سراپا رحمت ہے جو قیامت تک بلکہ بعد از قیامت بھی نہ صرف انسانیت بلکہ تمام عالمین کیلئے سراپا رحمت ہے.حق تعالیٰ کی آپﷺ سے محبت شب معراج اپنے عروج پر تھی جس کا ثبوت یہ واقعہ ہے.

شب معراج سرور دو عالم ﷺ نے جو عجائبات دیکھے ان میں سے ایک فرشتہ بھی دیکھا جسے کے بال و پر جلے ہوئے تھے.اس کو اس حالت میں دیکھ کر رحمت اللعالمینؐ نے حضرت جبریلؑ سے فرمایا.’’اے جبریل اس فرشتے کو کیا ہوا؟جبریلؑ نے عرض کی ’’یا رسول ؐ اللہ ! اس فرشتے کو اللہ تعالیٰ نے ایک شہر تباہ کرنے کیلئے بھیجا تھا اس نے وہاں پہنچ کر ایک شیر خوار بچے کو دیکھا تو اسے رحم آگیا یہ اسی طرح اللہ کا حکم پورا کئے بغیر واپس آگیا تو اللہ تعالیٰ نے اسے یہ سزا دی ہے‘‘. یہ سن کر رحمت اللعالمینﷺ نے فرمایا ’’اے جبریل کیا اس کی توبہ قبول ہو سکتی ہے‘‘. جبریل ؑ نے عرض کی کہ ’’قرآن پاک میں موجود ہےکہ ، جو توبہ کرے میں اسے بخش دیتا ہوں(القرآن)‘‘. یہ سن کر سید دو عالم ﷺ نے دربار الٰہی میں عرض کی ’’یا اللہ اس پر رحمت فرما اور اس کی توبہ قبول فرما‘‘. حضورﷺ کی درخواست پر رحمت الٰہی جوش میں آگئی . اللہ تعالیٰ نے نبی آخر الزمانﷺ سے فرمایا کہ ’’اس فرشتے کی توبہ یہ ہے کہ آپﷺ پر دس بار درود پاک پڑھے‘‘.آپ ﷺ نے اس فرشتے کو حکم سنایا تو اس نے دس بار درود پاک پڑھا، درود پاک پڑھنے کی دیر تھی کہ اللہ تعالیٰ نے اس کو بال و پر عطا کر دئےے اور وہ اوپر کو اڑ گیا . سارا معاملہ دیکھ کر تمام ملائکہ میں شور برپا ہوا کہ اللہ تعالیٰ نے درود پاک کی برکت سے کروبیوں(فرشتوں) پر رحم فرمایا ہے.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top