ایک بزرگ کا خواب

(قدرت روزنامہ09-جنوری-2016)ایک بزرگ چلہ کاٹنے میں مصروف تھے. اس دوران انہوں نے خواب میں دیکھا کہ ایک حاملہ کتیا کے پیٹ میں موجود بچے بھونک رہے تھے.

انہوں نے ان کے بھونکنے کی آواز سنی اور حیران ہوئے کہ پیٹ میں موجود بچے کیونکر بھونکے. بیدار ہونے کے بعد وہ اسی خواب پر غور کرنے لگے اور حیران ہونے لگے. چونکہ وہ تنہا چلہ کاٹنے میں مصروف تھے لہذا انہوں نے بارگاہ خداوندی میں درخواست کی کہ یا اللہ میری اس پریشانی کو رفع فرما تاکہ مجھے سکون حاصل ہو اور میں سکون قلب کے ساتھ تیری عبادت میں مصروف ہو سکوں. اس بزرگ کو غیبی ند ا سنائی دی کہ تم اس جاہلوں کی بے معنی گفتگو سمجھو. کتیا کے پیٹ میں بچوں کا بھونکنا بے فائدہ اور بے معنی بات ہے. ان کی آواز نہ تو کسی چور کو بھگا سکتی ہے اور نہ ہی جھاڑیوں میں چھپے ہوئے شکار کو باہر نکال سکتی ہے. ایک جعلی شخص بھی ایسی ہی حالت کا شکار ہوتا ہے. وہ اپنے آپ کو اہل ثابت کرنے کے لئے لفظوں کا سہارا لیتا ہے اور اپنے خریداروں کا دھوکا دیتا ہے. مومن کو کسی خریدار کی فکر نہیں ہونی چاہئیے کیونکہ ایک مومن کا خریدار اللہ بذات خود ہے اللہ تعالیٰ قرآن پاک میں فرماتا ہے کہ :. ” اللہ نے مومنوں سے ان کی جانیں خرید لی ہیں “ کسی اور خریدار کے پاس اس قدر قیمت کہاں ہے کہ وہ مومن کو خرید سکے وہ تو خود مفلس ہے.لہذا ایسے خریدار سے توقع رکھنا فضول ہے...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top