کتے کی روٹی

19

اسلام آباد (قدرت روزنامہ09فروری2017)ایک دن شہنشاہ اور بیر بل سیر کرتے ہوئے ایک چھوٹے گاؤں میں پہنچے. راستے میں شہنشاہ نے ایک کتا دیکھا جو کہ باسی، سیاہ اور خشک روٹی کا ٹکڑا کھا رہا تھا.

شہنشاہ نے بیر بل کو تنگ کرنے کا ارادہ کیا. اس نے کہا کہ :. ’’ دیکھو بیر بل وہ کتا کالی کھا رہا ہے ؟‘‘ بیر بل سمجھ گیا . شہنشاہ کا مطلب تھا. اس نے جواب دیا کہ :. ’’ مہاراج ! یہ اس کے لیے نعمت ہے .‘‘

شہنشاہ کو غصہ آ گیا اس نے چیخ کر کہا کہ :. ’’ بیر بل ! تم نہیں جانتے، کہ میری ماں کا نام نعمت ہے اور تم کہتے ہو کہ کتا نعمت کھا رہا ہے .‘ بیر بل نے نرمی سے جواب دیا کہ :. مہا راج ! پہلے تم نے کتے کو کھانے کے لیے کالی دی تم اچھی طرح جانتے ہو کہ :. ’’ میری ماں کا نام کالی ہے .‘‘ مگر شہنشاہ نے مداخلت کی کہ :. ’’ میں نے تمہاری ماں کا نام نہیں لیا ہے. روٹی باسی تھی اور کالی ہو چکی تھی. ‘‘ بیر بل نے جواب دیا کہ :. میں نے بھی آپ کے الفاط کو سنجیدگی سے نہیں لیا. مہاراج ! میں نے کہا کہ باسی اور کالی روٹی ہو گی. یہ نعمت ہے جو کہ بھوکے کتے کے لیے خوشی کا مقام ہے. میرا مقصد آپ کی والدہ کی بے حرمتی کرنا نہ تھا. یہ سن کر شہنشاہ خاموش ہو گیا.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

Daily QUDRAT is an UrduLanguage Daily Newspaper. Daily QUDRAT is The Largest circulated Newspaper of Balochistan .

رابطے میں رہیں

Copyright © 2017 Daily Qudrat.

To Top