اپنے آپ کو اندر سے مضبوط بنائیں

اسلام آباد (قدرت روزنامہ07فروری2017)دنیا کی تاریخ میں سب سے زیادہ شہرت ہٹلر نے پائی تھی‘ یہ وہ شخص تھا جو سکندر اعظم اور چنگیز خان سے بھی زیادہ مشہور ہوا. ہٹلر خوبیوں اور خامیوں کا عجیب مجموعہ تھا.

مثلاً یہ شراب نہیں پیتا تھا‘ سگریٹ نہیں پیتا تھا‘ جوا نہیں کھیلتا تھا‘ بداخلاقی کی دوسری سرگرمیوں میں ملوث نہیں ہوتا تھا‘ اسے دولت جمع کرنے کا کوئی شوق نہیں تھا‘ اس کا کسی بینک میں کوئی اکاﺅنٹ نہیں تھا اور دنیا میں اس کی ایک انچ زمین یا جائیداد نہیں تھی. آپ خامیوں کی بات کریں تو یہ بے انتہا ظالم تھا‘ اس نے دوسال میں ساٹھ لاکھ کے قریب یہودی مروا دئیے تھے‘

یہ اپنی ذات میں بے انتہا آمر تھا اور کسی دوسرے شخص کی بات تک سننے کیلئے تیار نہیں ہوتا تھا. بہرحال ہٹلر کی زندگی ایک عجیب داستان ہے. اس کا والد جونیئر کلرک تھا‘ یہ میٹرک میں فیل ہو گیا اور چھ سال تک ویانا کے ریلوے سٹیشن پر قلی کا کام کرتا رہا. پہلی جنگ عظیم میں سپاہی کی حیثیت سے فوج میں بھرتی ہوا. جنگ کے بعد سیاسی پارٹی کا ترجمان بن گیا اور تقریریں کرتا کرتا دنیا کا نامور لیڈر بن گیا. غرض ہٹلر دنیا کا عجیب کردار تھا‘ مورخین کا کہنا ہے اگر ہٹلر کی زندگی میں ایک چھوٹا سا واقعہ پیش نہ آتا تو شائد ہٹلر کبھی ہٹلر نہ بنتا. اس واقعے کا تعلق اس دور سے ہے جب وہ ویانا کے ریلوے سٹیشن پر قلی کا کام کرتا تھا. ایک دن اس نے سٹیشن پر کھڑے کھڑے ایک پروفیسر سے پوچھا ”مجھے ڈر بہت لگتا ہے‘ میں اس سے کیسے نکل سکتا ہوں“ پروفیسر مسکرایا‘ اس نے اپنا ہاتھ ہٹلر کے دل پر رکھا اور اس سے کہا ”میرے بچے دنیا کے سارے ڈر اس جگہ ہوتے ہیں‘ اس سے باہر کوئی ڈر‘ کوئی خوف موجود نہیں. تم یہاں سے ڈر نکال دو سارے خوف ختم ہو جائیںگے“. یہ بات سیدھی ہٹلر کے سینے پر لگی اور اس نے اسی دن اپنے دل سے سارا خوف نکال کر پھینک دیا.

یہ حقیقت ہے ہمارے سارے خوف‘ سارے ڈر‘ ساری سازشیں باہر نہیں ہوتے‘ یہ ہمارے اندر ہوتے ہیں. اگر ہمارا اندر صاف ہے‘ ہم اندر سے مضبوط ہیں تو پھر دنیا کی کوئی بیرونی طاقت ہمیں ڈرا نہیں سکتی‘ ہمیں شکست نہیں دے سکتی.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top