چار نعمتوں کا خاص ادب کیجئے

اسلام آباد (قدرت روزنامہ06فروری2017)ہمارے اکابرین علم کے ساتھ ساتھ ادب کا بھی خوب اہتمام فرمایا کرتے تھے‘ حضرت تھانوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے تھے کہ میں نے ہمیشہ چار باتوں کی پابندی کی. ایک تو یہ کہ میری لاٹھی کا جو سر زمین پرلگتا تھا اس کو بھی کعبے کی طرف کر کے نہیں رکھا‘ میں نے بیت اللہ شریف کا اتنا احترام کیا.

دوسری بات یہ کہ میں اپنے رزق کااتنا احترام کرتا تھا کہ چارپائی پر بیٹھتا تو خود ہمیشہ پائنتی کی طرف بیٹھتا

اور کھانے کو سرہانے کی طرف رکھتا اس طرح بیٹھ کر کھانا کھاتا تھا‘تیسری بات یہ جس ہاتھ سے طہارت کرتا تھا میں اس ہاتھ میں پیسے نہیں پکڑتا تھا کیونکہ یہ اللہ کا دیا ہوا رزق ہے. چوتھی بات یہ کہ جہاں میری کتابیں پڑی ہوتی ہیں میں اپنے استعمال شدہ کپڑوں کو ان دینی کتابوں کے اوپر کبھی نہیں لٹکایا کرتا تھا.

مگس کے ادب پر مغفرت حضرت پیر ذوالفقار احمد نقشبندی نے بتایا کہ ایک کتاب میں انہوں نے ایک عجیب واقعہ پڑھا ایک خطیب‘ خوش نویس اور کاتب تھے جو قرآن پاک لکھا کرتے تھے انہوں نے اپنا مشاہدہ بیان کیا وہ کہنے لگے کہ میں جب بھی قرآن پاک لکھتا تھا تو ہر دفعہ لکھنے کیلئے جب میں قلم اٹھاتا تو کوئی نہ کوئی کھی قلم کے ساتھ آ کر سیاہی چوسنے کیلئے بیٹھتی وہ فرمانے لگے کہ میں نے ساٹھ قرآن پاک شروع لے کر آخر تک لکھے لیکن ایک بات میرے مشاہدہ میں آئی کہ قرآن پاک کی ہر آیت پر سیاہی میں سے مکھی نے حصہ لیا‘ لیکن جب میں یہ آیت لکھتا تھا: ’’لا تقربو امال الیتیم‘‘ کہ اموال یتیم کے قریب بھی نہ جاؤ‘ تو ساٹھ قرآن پاک لکھتے ہوئے کبھی مکھی نے اس میں حصہ نہ لیا. اللہ رب العزت کے اس حکم ایک مکھی جیسے جاندار میں بھی اتنا ادب حالانکہ یہ حکم انسانوں کو ہو رہاہے لیکن اس کو لکھنے کیلئے جو سیاہی لی جا رہی ہے مکبھی اس اس سیاہی کو چوسنا پسند نہیں کرتی.

..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

تازہ ترین

Daily QUDRAT is an UrduLanguage Daily Newspaper. Daily QUDRAT is The Largest circulated Newspaper of Balochistan .

رابطے میں رہیں

Copyright © 2017 Daily Qudrat.

To Top