ایم فل کی طالبہ کو ہراساں کیے جانے کے معاملے پر ایک اسسٹنٹ پروفیسر کو 90 دن کے لیے معطل

فیصل آباد(قدرت روزنامہ19اپریل2017) گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد (جی سی یو ایف) نے ایم فل کی طالبہ کو ہراساں کیے جانے کے معاملے پر ایک اسسٹنٹ پروفیسر کو 90 دن کے لیے معطل کردیا.یونیورسٹی کے رجسٹرار کی جانب سے 17 اپریل کو جاری کیے گئے نوٹیفکیشن کے مطابق، 'جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے معاملے پر بنائی گئی کمیٹی کی تجاویز پر وائس چانسلر کی جانب سے ڈاکٹر ناصر رسول کو فوری طور پر 90 روز کے لیے معطل کیا جارہا ہے'.

وائس چانسلر کے احکامات کے بعد کیمسٹری ڈپارٹمنٹ کے اسسٹنٹ پروفیسر کے خلاف تحقیقات کا آغاز کردیا گیا. واضح رہے کہ گذشتہ ماہ 27 مارچ کو آرگینگ کیمسٹری ڈپارٹمنٹ میں ریسرچ کی ایک طالبہ نے مذکورہ پروفیسر کے خلاف شکایت کی تھی.جس پر یونیورسٹی کے وائس چانسلر نے کمیٹی کو معاملے کی انکوائری کی ہدایات دیتے ہیوئے 7 اپریل کو رپورٹ جمع کروانے کو کہا تھا.وائس چانسلر کے نام لکھی گئی درخواست میں طالبہ نے موقف اختیار کیا تھا کہ اسے ڈاکٹر رسول کی زیرنگرانی ریسرچ ورک کرنا تھا اور بعض اوقات طلبہ کو ان کے ساتھ لیبارٹری میں بھی کام کرنا پڑتا ہے.مذکورہ طالبہ نے لکھا، 'ڈاکٹر رسول نے مسلسل میرے ساتھ غیر اخلاقی رویہ اختیار کیا، جو میری عزت و وقار کے خلاف ہے'.طالبہ کا کہنا تھا کہ 'پروفیسر مسلسل غیر اخلاقی فون کالز اور ٹیکسٹ میسجز بھیجتے تھے اور شکایت کرنے کی صورت میں سنگین نتائج کی دھمکیاں دیتے تھے'.مذکورہ طالبہ نے لکھا،' میں یہ مزید برداشت نہیں کرسکتی، ان کی غیر اخلاقی گفتگو میرے لیے ناقابل برداشت ہے'. طالبہ نے وائس چانسلر پر زور دیا کہ 'وہ متعلقہ استاد کے خلاف سخت ایکشن لیں اور ان کی عزت وقار کا بھی بالکل اسی طرح تحفظ کریں جس طرح وہ اپنی بیٹی کے لیے کرتے ہیں'.مذکورہ طالبہ نے ڈاکٹر رسول کی جانب سے بھیجے گئے ٹیکسٹ میسجز کے سکرین شاٹس کے پرنٹ آو¿ٹ بھی ثبوت کے طور پر تحریری شکایت کے ساتھ منسلک کیے تھے.یونیورسٹی رجسٹرار نے مذکورہ پروفیسر کی معطلی کے لیے جاری کیے گئے نوٹیفکیشن میں کہا کہ ڈاکٹر رسول کے خلاف پنجاب ایمپلائیز، ڈسپلن اینڈ اکائونٹبلیٹی ایکٹ 2006 کے تحت انکوائری کے آغاز کا معاملہ یونیورسٹی سنڈیکیٹ کی اگلی میٹنگ کے سامنے رکھا جائے گا...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top