پاکستان بیلٹ و روڈ منصوبے سے مستفید ہونیوالا اہم ملک بن گیا ہے، ماہرین

اسلام آباد (قدرت روزنامہ17فروری2017)چین کے سرکاری میڈیا (گلوبل ٹائمز ) نے ماہرین کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ پاکستان چین کے صدر شی چن پھنگ کے ون بیلٹ ون روڈ منصوبے سے اہم مستفید ہونیوالے کے طورپر ابھرا ہے،خاص طورپر اپنے توانائی کے بحران سے نجات حاصل کرنے کے سلسلے میں چین راستے سے متصل ممالک بالخصوص پاکستان کے ساتھ توانائی تعاون کو مستحکم کرنے کو انتہائی ترجیح دے رہا ہے ، پاکستان اربوں ڈالر مالیت کے اقتصادی راہداری منصوبے جو چین کے انرجی ٹرانسپورٹ سکیورٹی کی بھی ضمانت دیتا ہے سے فائدہ اٹھا رہا ہے، خشکی اور بحری راستے کے ذریعے تیل و گیس کی تقسیم کے تمام مشمولہ نیٹ ورک سے کافی حد تک مشرق وسطیٰ ، وسطی ایشیاء اور جنوبی مشرقی ایشیاء کے علاوہ پاکستان میں انرجی تجارت کے طریقے کو تبدیل کرسکتا ہے، ماضی میں چین زیادہ تر مشرق وسطیٰ اور افریقہ سے تیل و گیس برآمد کرتا تھا ،2014ء میں چین روس گیس معاہدے نے نہ صرف چین کو اپنی برآمدات کو وسیع کرنے کی اجازت دی ہے بلکہ اس سے گیس کی درآمد کے چار اہم روٹس قائم ہوئے ہیں اور گیس کی کھپت کے اپنے تناسب میں اضافہ کرنے کے لئے چین کو مدد بھی ملی ہے، درحقیقت بیلٹ و روڈ روٹ سے متصل ممالک کے ساتھ توانائی تعاون چین کی توانائی سکیورٹی کی محض ضمانت دینے کے علاوہ کئی پیچیدگیاں ہیں ، اس سے چین کو اپنی فاضل پیداواری گنجائش کا مسئلہ حل کرنے میں مدد مل سکتی ہے اور عالمی طورپر توسیع دینے کے لئے چینی فرموں کی حوصلہ افزائی ہو سکتی ہے ، ملک کی ٹیکنالوجی آمادگی کا مطلب یہ ہے کہ اس سے نہ صرف اقتصادی فوائد حاصل ہو ں گے بلکہ اس کے پارٹنروں کو ماحولیاتی فوائد بھی حاصل ہوں گے ، مثال کے طورپر تھرمل پاور تعاون بیلٹ و روڈ منصوبے کے تحت بدستور ترجیح ہے، چین کی فاضل تھرمل پاور اکیوپمنٹ پروڈکشن گنجائش کے باوجود روٹ کے ساتھ تھرمل پاور پلانٹ کی تعمیر کی زبردست مانگ ہے، پاکستان جیسے ممالک اور افریقی ممالک میں شہریوں کو بجلی تک محدود رسائی حاصل ہے اور موجودہ تھرمل پاور یونٹس فرسودہ ہیں اور انہیں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے، سربیا میں تقریباً تین دہائیوں میں کوئی نیا بجلی پیدا کرنیوالا یونٹ شامل نہیں کیا گیا ہے جبکہ موجودہ یونٹوں کی سروس لائف ختم ہونیوالی ہے ، اس سے چین کی تھرمل ٹیکنالوجیوں جو ملکی ساختہ اور جدید ہیں کیلئے زبردست مواقع فراہم ہوں گے..

.


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top