عدالت میں جج نہیں مولوی بیٹھاہواہے اوراس نے عدالت کو مسجد بنادیا ہے:عاصمہ جہانگیر

اسلام آباد (قدرت روزنامہ09مارچ2017) معروف وکیل طارق اسدایڈوکیٹ پرعاصمہ جہانگیرکی طرف سے حملے کی کوشش. تفصیلات کے مطابق ہائی کورٹ میں سوشل میڈیاپرگستاخی رسالت کے مقدمے کے بعد جب وکلاۓ عدالت سے باہرآئے توطارق اسدایڈوکیٹ اورعاصمہ جہانگیرکے درمیان تلخ کلامی ہوگئی طارق اسدنے  بتایاکہ عاصمہ جہانگیرجب گاڑی میں بیٹھنے لگی تومیں نے کہاکہ آج آپ اس معاملے میں میرے ساتھ ہیں ؟ توعاصمہ جہانگیرنے کہاکہ کس معاملے میں ؟میں نے کہاکہ فیس بک پرتوہین رسالت کے واقعات کی روک تھام کے معاملے میں ،تواس موقع پرعاصمہ جہانگیرنے کہاکہ میں فیس بک استعمال نہیں کرتی تومیں نے کہاکہ اگرچہ آپ فیس بک استعمال نہیں کرتی مگر مقدمے کی سماعت میں توآرہی ہیں نا جس پرعاصمہ جہانگیرنے کہاکہ مجھے فیس بک اوریہ معاملہ دیکھنے کی ضرورت نہیں اوراس موقع پرعاصمہ جہانگیربھپرگئیں اورکہاکہ عدالت میں جج نہیں مولوی بیٹھاہواہے اوراس نے عدالت کو مسجد بنادیا ہے میں اس کونہیں مانتی جس پرطارق اسدایڈوکیٹ نے کہاکہ میڈم میں نے ماضی میں آپ کے متعلق جوکہاتھا وہ درست تھا جس پرعاصمہ جہانگیرگاڑی سے باہرنکل آئیں اورطارق اسدپرحملے کی کوشش کی مگروہاں پرموجود افرادنے بیچ بچاؤکروایا اوراس موقع پرعاصمہ جہانگیرکے سیکورٹی گارڈ بھی اترآئے طارق اسدایڈوکیٹ نے اوصاف سے گفتگوکرتے ہوئے کہاکہ میں عاصمہ جہانگیرسے معافی مانگنے کوتیارہوں وہ اگرمیڈیاکے سامنے ختم نبوت کااقرارکرلیں ..

.


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top