بندوق کے زور پر اسلامی نظام لانے کے مخالف ہیں،مولانا فضل الرحمان

لکی مروت(آن لائن) جمعیت علماء اسلام کے مرکزی امیر اور قومی اسمبلی کی کشمیر کمیٹی کے چیئرمین مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ ان کی جماعت بندوق کے زور پر اسلامی نظام لانے کی مخالف ہے ہم جمہوری نظام میں رہتے ہوئے ملک میں شریعت محمدیؐ کے نفاذ کی کوششیں جاری رکھیں گے عوام کو چاہیے کہ جے یو آئی کا ساتھ دیں کیونکہ پارلیمنٹ میں ہماری نمائندگی زیادہ ہوگی تو شرعی قوانین کے نفاذ کا راستہ کوئی نہیں روک سکے گا وہ جامعہ حلیمیہ درہ پیزو میں ختم بخاری شریف کے سلسلے میں ایک بڑے اجتماع سے خطاب کررہے تھے شیخ الحدیث مولانا محمد ادریس نے ختم بخاری شریف کی آخری حدیث پر روشنی ڈالی جبکہ اجتماع سے دارالعلوم حقانیہ اکوڑہ خٹک کے نائب مہتمم مولانا انوارالحق نے بھی خطاب کیا اس موقع پر ضلع ناظم اشفاق احمد خان مینا خیل، مہتمم جامعہ حلیمیہ مولانا مفتی عبدالغنی، جے یو آئی کے ضلعی جنرل سیکرٹری مولانا سمیع اللہ مجاہد، مولانا تمیز الدین تتر خیل اور جید علماء کرام و مفتیان دین بھی موجود تھے مولانا فضل الرحمان نے فضلاء اور حفاظ کرام کی دستار بندی کی اور اپنے خطاب میں کہا کہ ہمارے اکابرین نے ہمیں بندوق کی بجائے دلیل سے بات منوانے کی تعلیم دی ،ہمیں امن کا راستہ بتایا اور شریعت کے مطابق لوگوں کو بنیادی حقوق کی فراہمی اور ان کی خدمت کا درس دیا انہوں نے اضا خیل(نوشہرہ) اجتماع کو تاریخ ساز قرار دیتے ہوئے کہا کہ دینی مدارس اور علماء کی مضبوطی سے اسلام کے آفاقی پیغام کو عام کرنے میں مدد ملے گی اور لوگ اللہ کے دین کی طرف مائل ہوں گے انہوں نے فارغ التحصیل علماء پر زور دیا کہ وہ صرف مسجد اور حجرے تک محدود نہ رہیں بلکہ علم عام کریں اور اسے عوام کی خدمت اور انہیں فائدہ پہنچانے کا ذریعہ بنائیں..

.


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top