عمران خان نے یونیورسٹی اصلاحات کی کوشش کی لیکن گورنر صاحب نے ان لوگوں کو بچا لیا۔ پروفیسر ضیا اللہ ہمدرد کا انکشاف

ردان (قدرت روزنامہ18-اپریل-2017) نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے عبدالولی خان یونیورسٹی کے لیکچرر ضیا اللہ ہمدرد کا کہنا تھا کہ میں مشعال خان کو جانتا تھا اگر مشعال نے کوئی گستاخانہ پوسٹ کی ہوتی اور میں ایک منٹ کے لیے بھی یہ دیکھ لیتا کہ اس کی کوئی پوسٹ گستاخانہ ہے تو میں فوری طور پر اسے وارننگ دیتا. انہوں نے کہا کہ مجھے افسوس ہے کہ میں مشعال کو بچا نہیں سکا.

میں ایمانداری سے کہہ رہا ہوں کہ میں لیکچرر شپ میں پیسے کمانے کے لیے نہیں بلکہ ایک مشن لے کر آیا تھا. میں گذشتہ چار سال سے یونیورسٹی میں پڑھا رہا ہوں. اور گذشتہ تین سال سے اس یونیورسٹی کی مافیا کے ساتھ لڑتا رہا . لیکن یونیورسٹی انتظامیہ میں سیاسی پارٹیاں ملوث تھیں. بہت سے لوگ یونیورسٹی کی شکایات لے کر بنی گالہ عمران خان کے پاس گئے جس کے بعد پی ٹی آئی چئیر مین عمران خان نے یونیورسٹی میں اصلاحات کی کوشش بھی کی . لیکن گورنر صاحب اس میں معاملے میں شامل ہو گئے اورانہیں کچھ اسٹے آرڈرز مل گئے گورنر صاحب کے ساتھ مل کر لوگ یونیورسٹی کے لوگوں کو بچانے لگے. انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی انتظامیہ میں یہ عجیب لوگ ہیں جو یونیورسٹی کو ٹھیک نہیں کر رہے تھے...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top