حیات آباد کمپلیکس کے قریب ججوں کی لے جانے والی وین پر دہشت گرد حملے میں استعمال ہونے والی موٹر سائیکل لاہور سے چوری ہونے کا انکشاف ہوا ہے

پشاور (قدرت روزنامہ17-فروری-2017) حیات آباد کمپلیکس کے قریب ججوں کی لے جانے والی وین پر دہشت گرد حملے میں استعمال ہونے والی موٹر سائیکل لاہور سے چوری ہونے کا انکشاف ہوا ہے.تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخواہ کے محکمہ انسداد دہشت گردی نے نامعلوم دہشت گردوں کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے.

ایک افسر کے مطابق ابتدائی تحقیقات میں انکشاف ہوا ہے کہ اس حملے میں جو موٹر سائیکل استعمال کی گئی وہ لاہور کے علاقے شاہدرہ سے چوری ہوئی تھی. نجی خبر رساں ادارے ایکسپریس ٹریبیون کے مطابق ایک پولیس افسر کا کہنا تھا کہ ”ہم نے انجن نمبر حاصل کر لیا ہے، اس سے پہلے شاہدرہ میں موٹر سائیکل چوری کی ایف آئی آر بھی درج کرائی جا چکی ہے. ایف آئی آر میں درج نمبر وہی ہے جو موٹر سائیکل کے انجن سے ملا ہے.“ ایک اور پولیس افسر نے خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ” حیات آباد خیبر ایجنسی کے ساتھ ملحق ہے اور صرف ایک دیوار ان دو علاقوں کو علیحدہ کرتی ہے. یہ بھی ممکن ہے کہ دہشت گرد خیبر ایجنسی سے آیا.“ پولیس افسر کا کہنا تھا کہ ایسا لگتا ہے کہ حملہ آور موٹر سائیکل پر نہیں آیا تھا بلکہ اسے موقع پر ہی موٹر سائیکل فراہم کی گئی. یہ حملہ بہت ہی اچھے اور مربوط طریقے سے پلان کیا گیا تھا. ان کا کہنا تھا کہ ”ہمارے پاس حملہ آور کا سر ہے جو صحیح حالت میں اور قابل پہچان ہے، ہم مزید تحقیقات کر رہے ہیں.“..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top