پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے موبائل کمپنی زونگ کے ٹی وی کمرشل پر پابندی عائد کردی

اسلام آؓاد(قدرت روزنامہ25مارچ2017)پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے موبائل کمپنی زونگ کے ٹی وی کمرشل پر پابندی عائد کردی ہے. پیمرا کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق ٹی کمرشل میں قابل اعتراض مواد شامل ہونے کی وجہ سے پابندی عائد کی گئی ہے اور ٹی وی چینل کو حکم جاری کیا کہ اس کمرشل کو چینلز پر نشر نہ کیا جائے.

تفصیلات کے مطابق پیمرا نے پاکستان براڈکاسٹنگ ایسوسی ایشن کو حکم نامہ جاری کیا تھا کہ وہ ”زونگ فور جی“ کا متنازعہ اشتہار نہیں چلائیں ، اور ایڈورٹائزر کو اس بات کا پابند بنایا جائے کہ وہ آئندہ ایسا اشتہار نہ بنائیں جس میں غیر اخلاقی مواد شامل ہو. متنازعہ اشتہار چلانے والے چینلز کے خلاف پیمرا آرڈیننس 2002سیکشن 29اورسیکشن 30کے تحت کارروائی کی جائے گی.پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے موبائل کمپنی زونگ کے ٹی وی کمرشل پر پابندی عائد کردی ہے. پیمرا کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق ٹی کمرشل میں قابل اعتراض مواد شامل ہونے کی وجہ سے پابندی عائد کی گئی ہے اور ٹی وی چینل کو حکم جاری کیا کہ اس کمرشل کو چینلز پر نشر نہ کیا جائے.تفصیلات کے مطابق پیمرا نے پاکستان براڈکاسٹنگ ایسوسی ایشن کو حکم نامہ جاری کیا تھا کہ وہ ”زونگ فور جی“ کا متنازعہ اشتہار نہیں چلائیں ، اور ایڈورٹائزر کو اس بات کا پابند بنایا جائے کہ وہ آئندہ ایسا اشتہار نہ بنائیں جس میں غیر اخلاقی مواد شامل ہو. متنازعہ اشتہار چلانے والے چینلز کے خلاف پیمرا آرڈیننس 2002سیکشن 29اورسیکشن 30کے تحت کارروائی کی جائے گی.پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے موبائل کمپنی زونگ کے ٹی وی کمرشل پر پابندی عائد کردی ہے. پیمرا کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق ٹی کمرشل میں قابل اعتراض مواد شامل ہونے کی وجہ سے پابندی عائد کی گئی ہے اور ٹی وی چینل کو حکم جاری کیا کہ اس کمرشل کو چینلز پر نشر نہ کیا جائے.تفصیلات کے مطابق پیمرا نے پاکستان براڈکاسٹنگ ایسوسی ایشن کو حکم نامہ جاری کیا تھا کہ وہ ”زونگ فور جی“ کا متنازعہ اشتہار نہیں چلائیں ، اور ایڈورٹائزر کو اس بات کا پابند بنایا جائے کہ وہ آئندہ ایسا اشتہار نہ بنائیں جس میں غیر اخلاقی مواد شامل ہو. متنازعہ اشتہار چلانے والے چینلز کے خلاف پیمرا آرڈیننس 2002سیکشن 29اورسیکشن 30کے تحت کارروائی کی جائے گی...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top