جدید ٹیکنالوجی کے اس دور میں انٹرنیٹ کا جادو سر چڑھ کر بول رہا ہے۔ انٹرنیٹ اگرچہ آج کے دور کی اہم ضرورت ہے مگر ہم اس کے غیرضروری طور پر عادی ہو چکے ہیں

نیویارک(قدرت روزنامہ24مارچ2017)جدید ٹیکنالوجی کے اس دور میں انٹرنیٹ کا جادو سر چڑھ کر بول رہا ہے. انٹرنیٹ اگرچہ آج کے دور کی اہم ضرورت ہے مگر ہم اس کے غیرضروری طور پر عادی ہو چکے ہیں، حتیٰ کہ کھانا کھانے کے لیے بھی اس ہوٹل کا انتخاب کرتے ہیں جہاں وائی فائی کی سہولت موجود ہو.

اب سائنسدانوں نے اپنی ایک تحقیق میں اس حوالے سے ایسا انکشاف کر دیا ہے کہ جان کر آپ بھی سوچ میں پڑ جائیں گے. سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”لوگ انٹرنیٹ کے اس قدر عادی ہو چکے ہیں کہ وائی فائی کے لیے جنسی ضرورت بھی ترک کر سکتے ہیں.“ یعنی اب انسان انٹرنیٹ کو جنس پر ترجیح دینے لگے ہیں. برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق امریکی سائنسدانوں نے اپنی تحقیق کے لیے ایک سروے کیا ہے جس میں 1500افراد سے ان کی انٹرنیٹ استعمال کرنے کی عادات کے متعلق سوالات کیے گئے. سروے میں اوسط بالغ افراد نے اعتراف کیا کہ وہ انٹرنیٹ کے بغیر صرف 16گھنٹے گزار سکتے ہیں، اس کے بعد انہیں اگر انٹرنیٹ میسر نہ ہو تو وہ اداس ہو جاتے ہیں. اکثر کا کہنا تھا کہ ان کا موبائل فون کبھی بھی ان سے تین فٹ سے زیادہ دور نہیں رہتا، یعنی وہ ہمہ وقت فون اپنے پاس رکھنے کے عادی ہو چکے ہیں. سائنسدانوں نے ان لوگوں سے ایک سوال یہ بھی کیا کہ ”تم وائی فائی کے بعد کون کون سی چیزیں ایک مہینے کے لیے ترک کر سکتے ہو؟“صارفین کے جوابات نے سائنسدانوں کو بھی حیران کر دیا. صارفین نے جو چیزیں ترک کرنے پر رضامندی ظاہر کی انہیں سائنسدانوں نے صارفین کی شرح کے لحاظ سے ترتیب دیا ہے. فہرست میں صارفین نے بالترتیب فاسٹ فوڈ، ورزش، مٹھائی، گھر سے باہر جانے، کافی، جنسی عمل، موسیقی، ٹی وی یا فلمیں دیکھنے اور دوستوں کو چھوڑنے پر رضامندی ظاہر کی...


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top