سعودی حکومت نے اب تک کا سب سے خوفناک اعلان کر دیا

جدہ (قدرت روزنامہ10فروری2017)سعودی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ 2018 میں ایسی کمپنی جس میں غیر ملکی کارکنان کی تعداد سعودی کارکنان سے زیادہ ہوگی اس سے فی اضافی غیر ملکی کارکن 400 ریال فیس ماہانہ لی جائیگی. کسی کمپنی میں سعودی کارکنان کی تعداد زیادہ ہو گی تو ایسی صورت میں فی غیر ملکی کارکن ۳۰۰ ریال ماہانہ لئیے جائیں گے.

۲۰۲۰ کے دوران نجی اداروں میں سعودی ملازمین سے کم تعداد والے نجی اداروں میں فی غیر ملکی کارکن 700 ریال لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے. اس مد میں 65 ارب ریال کی آمدن متوقع ہے. سعودی عرب نے مالیاتی مقابل اسکیم کے تحت تارکین وطن سے ماہانہ فیس کی وصولی کا پروگرام مرتب کرلیا ہے عملدرآمد 2017 کی دوسری ششماہی سے ہوگا. یہ پروگرام آمدنی کے وسائل میں تنوع پیدا کرنے کی حکمت عملی کے تحت بنایا گیا ہے. 2017 میں مرافقین اور مرافقات سے ماہانہ ۱۰۰ ریال فیس کی وصولی سے ایک ارب ریال جمع ہونگے. ہر غیر ملکی کارکن سے فی مرافق 2017 کے دوران ۱۰۰ ریال ماہانہ ۲۰۱۸ میں ۲۰۰، ۲۰۱۹ میں ۳۰۰ اور ۲۰۲۰ میں فی مرافق 400 ریال ماہانہ لئے جاینگے . ۲۰۱۹ میں ایسی کمپنی جس میں غیر ملکی کارکنان کی تعداد سعودی کارکنان سے زیادہ ہو گی اس سے فی اضافی غیر ملکی کارکن 600 ریال فیس ماہانہ لی جائیگی کسی کمپنی میں سعودی کارکنان کی تعداد زیادہ ہو گی تو ایسی صورت میں فی غیر ملکی کارکن ۵۰۰ ریال ماہانہ لئیے جا ئنگے. ۲۰۲۰ میں ایسی کمپنی جس میں غیر ملکی کارکنان کی تعداد سعودی کارکنان سے زیادہ ہو گی . فی اضافی غیر ملکی کارکن ۸۰۰ ریال فیس ماہانہ لی جائیگی. کسی کمپنی میں سعودی کارکنان کی زیادہ ہو گی تو ایسی صورت میں فی غیر ملکی کارکن 700 ریال ماہانہ لئیے جاینگے..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top