سعودی عرب کی تاریخ میں پہلی بار ”خواتین کا دن“ منایا گیا

ریاض(قدرت روزنامہ07فروری2017)سعودی عرب میں خواتین کی ڈرائیونگ کا معاملہ ہو یا ان کے دیگر حقوق، عالمی انسانی حقوق کی تنظیمیں و دیگر ادارے طویل عرصے سے سعودی حکومت پر ان کے لیے دباﺅ بڑھائے ہوئے تھے. شاید اسی کا نتیجہ ہے کہ گزشتہ دنوں سعودی عرب کی تاریخ میں پہلی بار ”خواتین کا دن“ منایا گیا جس پر دنیا حیران رہ گئی.

ایمریٹس وومن کی رپورٹ کے مطابق خواتین ڈے کے تحت یکم تا 4فروری تقریبات کا انعقاد کیا گیا. سب سے بڑی تقریب شاہ فہد کلچرل سنٹر میں ہوئی جس میں خواتین بڑی تعداد میں شریک ہوئیں. اس دوران مباحثوں میں خواتین کے لیے گارڈین شپ سے آزادی سمیت انہیں تمام بنیادی قانونی حقوق فراہم کرنے کا مطالبہ کیا گیا. اس تقریب میں سعودی شاہی خاندان کی خواتین نے بھی شرکت کی.

 رپورٹ کے مطابق شہزادی الجواہرہ بنت فہد السعود نے ”خوتین کی تعلیم اور معاشرے میں ان کا کردار“ کے عنوان سے ایک ایک مباحثے کی میزبانی بھی کی.شہزادی عدیلہ بنت عبداللہ السعود، جو خواتین کے حقوق کے لیے کام کرنے کے حوالے سے خاصی شہرت رکھتی ہیں، نے ریاستی ورثے پر مذاکرے کا اہتمام کیا. سعودی جنرل اتھارٹی فار سپورٹس کے خواتین سیکشن کی انڈرسیکرٹری شہزادی ریما بنت بیندر بن سلطان نے ایک مذاکرے میں خطاب کرتے ہوئے سعودی خواتین کی زندگیوں میں کھیلوں کی اہمیت کو اجاگر کیا. رپورٹ کے مطابق ان تمام تقریبات میں صرف خواتین کو شمولیت کی اجازت تھی تاہم آﺅٹ ڈور سرگرمیوں میں ماﺅں کو اپنے نوجوان بیٹوں کو ساتھ لانے کی اجازت تھی.
..


قدرت میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
Loading...

تازہ ترین

To Top